6

تحریک لبیک پاکستان نے فیض آباد معاہدہ پر عملدرآمد کے لئے حکومت کی جانب سے مزید وقت دینے کی درخواست منظور کر لی

تحریک لبیک پاکستان نے حکومت کے ساتھ ایک نئے معاہدے پر دستخط کرنے کے بعد 17 فروری کو دوبارہ احتجاج شروع کرنے کے اپنے منصوبے کو ملتوی کر دیا ہے۔ وفاقی وزیر داخلہ اور مذہبی وزراء کے دستخط شدہ معاہدے میں ، حکومت نے ٹی ایل پی کے تمام کارکنوں اور رہنماؤں کے نام فورتھ شیڈول سے ہٹانے اور 20 اپریل 2021 سے پہلے پارلیمنٹ میں معاہدہ فیض آباد میں درج مطالبات پیش کرنے پر اتفاق کیا ہے۔

اس معاہدے میں کہا گیا ہے کہ "20 اپریل 2021 تک طرفین سے کوئی ایسی سرگرمی جو معاہدہ کی رو کے منافی ہو، معاہدہ منسوخ سمجھا جائے گا۔ اس ضمنی معاہدہ کا اعلان وزیر اعظم پاکستان کریں گے جس کے بعد یہ معاہدہ نافذ العمل ہوگا۔" اس نئے معاہدے پر ٹی ایل پی کی جانب سے ڈاکٹر محمد شفیق امینی ، علامہ غلام غوث بغدادی ، علامہ غلام عباس فیضی اور علامہ عمیر اظہری نے دستخط کیے ہیں۔

ایک ویڈیو میں نئے معاہدے پر دستخط ہونے کی تصدیق کرتے ہوئے ، ڈاکٹر شفیق امینی نے بتایا کہ حکومت نے ابتدائی طور پر ان سے مطالبہ کیا کہ وہ فیض آباد 2020 معاہدے پر عملدرآمد کا مطالبہ نہ کریں۔ حکومت نے ٹی ایل پی کے سخت موقف کے بعد دوبارہ مذاکرات کا آغاز کیا اور مزید وقت طلب کیا جس پر تحریک لبیک پاکستان کی مرکزی مجلس شوری نے مشروط طور پر اس درخواست کو منظور کر لیا۔ اس شرط کے مطابق معاہدے کا اعلان وزیراعظم پاکستان کریں گے۔